ٍٍََََََََََََََ۔،۔عینی شاہدین کے مطابق برمی افواج اور بدھ مت شدت پسندوں نے بچوں کے سر قلم کر دیئے۔،۔

شان پاکستان برما روہنگیا۔ برطانوی اخبار دی اینڈی پینڈٹThe Independent کی رپورٹ کے مطابق برمی افواج اور بدھ مت شدت پسندوں کے ظلم و ستم سے بچنے والے افراد اور روہنگیا مسلمان بچوں کی بڑی تعداد جو بنگلہ دیش کی طرف فرار ہو کر جا رہے تھے ان کو راستے میں روک کر روہنگیا مسلمانوں کے سر قلم کر دیئے اور ننھی لاشوں اور عینی شواہدین کے مطابق زندہ جلانے کے واقعات بھی دیکھے گئے ہیںRohingya in Burmaبرما روہنگیا میں بے بس مسلمانوں کی نسل کشی جاری ہے یورپ سمیت دنیا اور دنیا کا سب سے بڑا ٹھیکیدار امریکہ یہ ظلم و ستم دیکھتے ہوئے بھی چپ چاپ تماشائی بنا دیکھ رہا ہے۔
تقریباَ60 ہزار سے زائدَ ظلم و ستم سے تنگ مسلمان بنگلہ دیش کی سرحد تک پہنچنے میں کامیاب ہو گئے ہیں ، جو مسلمان فرار ہوتے ہوئے دیکھے جائیں ان کو مار دیا جاتا ہے کیونکہ وہ ظلم ستم کے عینی شاہد ہیں۔ 41 سالہ عبد الرحمان نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اس کے گاوں چوٹ پیون پر مسلسل پانچ گھنٹوں تک حملہ جاری رکھا ، روہنگیا کے مسلمانوں کو ایک جھونپڑی میں لے جایا گیا اور دائرے میں بٹھا کر آگ لگا دی بے گناہ اور نہتے مسلمانوں کو چیخ کو پکار کی آوازوں میں زندہ جلا دیا گیا۔جن میں عبد الرحمان کا بھائی بھی زندہ جلا دیا گیا اس نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے بھرائی آواز اور آنسوں کی بہتی لڑی میں بتایا کہ اس کے دو بھتیجوں جن کی عمریں چھ اور نو برس کی تھی ان کے سر قلم کر دیئے گئے اور اس کی سالی کو گولی مار کر شہید کر دیا گیا ، ان کا کہنا تھا کہ راستہ بھر بہت سی جلی کٹی اور سوختہ لاشیں دیکھیں لاشوں سے پتہ چل رہا تھا کہ ان کو بیدردی سے مارا گیا تھا۔

Members-of-Myanmar-s-Muslim-Rohingy Rohingya-in-Myanmar-Proteste-in-Suedkorea Myanmar-soldiers-ride-on-a-boat-tra Myanmar-State-Counselor-Aung-San-Suu-Kyi-gives-a-memorial-speech-for-Aung-ShweA group of Muslim Rohingyas in Ghumdhum, Cox's Bazar weep as Bangladesh border guards (not pictured) order them to leave their makeshift camp and force them out of the country, Monday, Aug. 28, 2017. Since 2012, more than 1,000 Rohingya have been killed, some 320,000 live in squalid camps in Myanmar and neighboring Bangladesh, and thousands have embarked on perilous sea voyages to other Southeast Asian countries, according to estimates by the U.S.-based Human Rights Watch and the United Nations. (AP Photo/Mushfiqul Alam)

Rohingya refugee men carry a man after travelling over the Bangladesh-Myanmar border in Teknaf, Bangladesh, September 1, 2017. REUTERS/Mohammad Ponir Hossain

A Rohingya boy jumps over the border fence to enter inside Bangladesh border, in Cox’s Bazar, Bangladesh, August 27, 2017. REUTERS/Mohammad Ponir Hossain

Women and children fleeing violence in their villages arrive at the Yathae Taung township in Rakhine State in Myanmar on August 26, 2017. Terrified civilians tried to flee remote villages in Myanmar's northern Rakhine State for Bangladesh on August 26 afternoon, as clashes which have killed scores continued between suspected Rohingya militants and Myanmar security forces. / AFP PHOTO / Wai Moe

A member of Border Guard Bangladesh (BGB) tells a Rohingya girl not to come on Bangladesh side, in Cox’s Bazar, Bangladesh, August 27, 2017. REUTERS/Mohammad Ponir HossainA Rohingya woman cries as the Member of Border Guard Bangladesh (BGB) restrict them from entering Bangladesh, in Cox’s Bazar, Bangladesh, August 27, 2017. REUTERS/Mohammad Ponir Hossain

Rohingya families collect food offered to them by local Bangladeshi villagers at a makeshift shelter at Ghumdhum, Cox's Bazar, Bangladesh, Sunday, Aug.27, 2017. Several hundred Rohingya trying to flee Myanmar got stuck in a "no man's land" at one border point barred from moving farther by Bangladeshi border guards. (AP Photo/Mushfiqul Alam)

aan

ہیومین واچ ایشیاء | Asien | Human Rights Watchکے سربراہ فل رابرٹسن کے مطابق اور سیٹیلائٹ تصویروں کے مطابق اسلم آبادی کی تباہی ہماری توقعات سے بڑھ کر ہے اب تک تقریباََ 17مقامات دریافت کئے جا چکے ہیں جہاں آگ لگا کر بستیوں کی بستیاں جلا کر راکھ کا ڈھیر بنا دیئے گئے،ضروری ہے کہ وہاں جا کر صورتحال کا جائزہ لیا جائے۔آنگ سان سوچیAung San Suu Kyi جو نوبل یافتہ افراد میں شامل ہے ابھی تک کچھ نہ کر سکی۔