۔،۔آسٹریا میں عوامی مقا مات پر پورے چہرے کے نقاب پر پابندی۔،۔

شان پاکستان آسٹریا ویانا۔ آسٹریا گورنمنٹ کے مطابق آسٹرین اقتدار کو محفوظ رکھنے کے لئے ضروری ہے کہ قانون کے مطابق سر کے سامنے کے بالوں کی لکیر سے لے کر ٹھوڑی تک چہرہ نظر آنا چاہیئے ان کا کہنا ہے کہ یہ اقدام آئندہ ماہ منعقد ہونے والے عام انتخابات سے قبل کیا گیا ہے جس میں دائیں بازو کی جماعت فریڈم پارٹی Freedom Party of Austriaکو فائدہ ہو سکتا ہے ، یاد رہے تمام مسلمان تنظیموں نے اس قانون کی مکمل مذمت کی ہے ان کا کہنا ہے کہ آسٹریاAsteria میں بہت کم تعداد میں مسلمان عورتیں پورے چہرے کا نقاب کرتی ہیں۔ایک اندازہ کے مطابق آتٹریا میں تقریباََ 150 خواتین پورے چہرے کا برقع استعمال کرتی ہیںVianna Asteriaکے سیاحتی حکام کو خدشہ درپیش ہے کہ اس اقدام سے خلیجی ممالک سے آنے والے سیاحوں میں کمی آ سکتی ہے۔ فرانس اور بلجیئم نے 2011 میں برقع پر پابندی متعارف کروائی، جبکہ جرمن چانسلر اگیلا میرکل کا بھی کہنا ہے کہ جرمنی میں بھی پورے چہرے کے نقاب پر پابندی ہونی چاہیئے۔

a5d8a4f15993cfedc2f630165d4f87cd nintchdbpict000295002975 6541e135d132aee884b4108d3fca6950--niqab-fashion-beautiful-hijab