۔،۔ کشمیر کمیونٹی جرمنی کی طرف سے عظیم الشان سالانہ عید میلاد النبی ﷺ کا اہتمام۔،۔

نذر حسین شان پاکستان جرمنی فرینکفرٹ۔ جرمنی میں بسنے والی کشمیر کمیونٹی ہر سال ربیع الاول کے مہینہ میں عظیم الشان عید میلاد النبی ﷺ کا اہتمام کرتی آئی ہے اسی سلسلہ میں آج بھی کشمیری کمیونٹی نے ادارہ پاک دارالسلام گوِنَر سَٹراسے میں آمد مصطفی کی خوشی میں خوبصورت پروگرام ترتیب دیا ہے، جس میں برطانیہ کے خطیب اعظم مولانا ریاست علی قادری، پاکستان کے مشہور ثناء خوان محمد عابد معصومی، جگر گوشہ سید منظور الکونین سلمان کونین شاہ پاکستان سے تشریف لائے ہیں ،مولانا قاری علی محمد قادری برطانیہ ، محفل کو پر نور بنانے کے لئے نہ صرف فرینکفرٹ بلکہ دور دراز علاقوں سے عاشقان رسول ﷺ تشریف لائے تھے ، قاری محمد صدیق پتھروی نے نظامت سنبھالی ،تلاوت کی آنکھیں بار بار اشک بار ہو رہی تھیں آواز بھرا رہی تھی ،دعا مانگی آنکھیں اشک بار، نعت پڑھی آنکھیں اشک بار ، مسجد کی بات چھیڑی آنکھیں اشک بار، بالآخر طارق نقشبندی نے نعت پیش کی ،2ننھے بچوں نے نعت پیش کی ،ملک محمد سرور،محمد مبارک، محمد صغیر،محمد یونس،سید افضال،سید زبیر ترمزی نے نعت پیش کر کے داد حاصل کی ،اسی دوران محفل میں موجود افراد نے مسجد کے لئے چندہ دینا بھی شروع کر دیا ، صاحبزادہ سلمان کونین نعروں کی گونج میں تشریف لائے اور محفل میں سبحان اللہ کی صدائیں بلند ہونے لگیں دیکھتے ہی دیکھتے انہوں نے محفل میں جان ڈال دی کیا خوبصورت آواز وقت کی کمی ہونے کے باعث آپ صرف دو تین نعتیں ہی سنا سکے، برطانیہ سے تشریف لانے والے حضرت مولانا ریاست علی قادری خطیب اعظم برطانیہ نے بھی سیرت مصطفی پر نعروں کی گونج میں مختصر خطاب فرمایا ، ثباء خوان محمد عابد معصومی نے محفل میں اپنی آواز کا جادو پیش کیا تو محفل جھوم اُٹھی مسجد میں ہر شخص ان کی آواز میں آواز ملاتا نظر آیا اور وہ اپنی آواز کے جادو سے شرکاء محفل کے دل جیتنے لگے ان کے بعد مولانا قاری علی محمد قادری نے ولادت مصطفی پر خطاب فرمایا ۔ہم مسلمانوں کے لئے سلطان مدینہ منورہ، شہنشاہ مکہ مکرمہ ﷺ کے یوم ولادت سے بڑھ کر کون سا دن یوم انعام ہو گا۔تمام نعمتیں ان ہی کے طفیل تو ہمیں ملی ہیں یہ دن تو عید کے دن سے بھی بہتر کیونکہ ان ہی کے صدقہ سے ہمیں عید بھی عطاء کی گئی اسی وجہ سے پیر کے دن روزہ رکھنے کا سبب ارشاد فرمایا۔فیہِ وُلٍدتُ یعنی اس دن میری ولادت ہوئی۔ جس کا خُدا خالق ہے محمدﷺ اس کے رسول ہیں۔ کسی نے کیا خوب فرمایا کہ۔ جشن عید میلاد النبی محمد ﷺ اس کے عاشقوں کی جان ہے اس دن ہر مسلمان شادماں نظر آتا ہے غمزدہ ہوتا ہے تو شیطان ۔ مرحبا یا مصطفی ۔آقا کی آمد مرحبا۔خصائص کُبری میں لکھ اہے کہ سید تنا آمنہؓ فرماتی ہیں ۔میں نے دیکھا کہ تین جھنڈے نصب کئے گئے ۔ایک مشرق میں،دوسرا مغرب میں۔ اور تیسرا کعبہ کی چھت پر اور حضور اکرمﷺ کی ولادت ہو گئی۔ اللہ نے قرآن میں فرمایا نور آیا پر یہ نہیں بتایا کب بنایا ، بنایا پہلے آیا اب ، نور کو کب بنایا ،دنیا میں کب نہیں تھا تب بنایا، بنانے والا خدا ،بننے والا نور ،اول خلقاللہ نوری ، زمیں سے پہلے زماء سے پہلے ،مدی سے پہلے مکہ سے پہلے ، ذرہ ذرہ سے پہلے، قطرہ قطرہ سے پہلے۔ ملک سے پہلے جبرائیل سے پہلے میکائیل سے پہلے،آدم سے پہلے عبد المطلب سے پہلے عبد اللہ سے پہلے ،ایک ہمارے نبی کا نور ہے جو اپنے باپ سے پہلے اپنے دادا سے پہلے ، پہلے اللہ تھا دوسرا نہ تھا جب نور محمد بنا تیسرا نہ تھا اللہ کہتا ہے تجھے اس لئے بنایا میں تمہیں دیکھوں تو مجھے دیکھ۔ یہی محبت ہے، احد بھی دیکھا احدمیت بھی، محفل کے اختتام پر محمدی لنگر پیش کیا گیا۔