-،- قلم کاروان کی ادبی نشست،ڈاکٹرساجدخاکوانی -،-

منگل مورخہ 8جنوری2019 بعد نماز مغرب قلم کاروان کی ادبی نشست مکان نمبر1اسٹریٹ 38،G6/2اسلام آبادمیں منعقد ہوئی۔ پیش نامے کے مطابق آج کی ادبی نشست میں ’’مسلمان اقوام متحدہ‘‘کے موضوع پربزرگ کالمسٹ میرافسرامان کی تحریراورکراچی سے آئی ہوئی معروف شاعرہ،افسانہ نویس اورصحافی نغمانہ شیخ کے ساتھ ایک شام کااہتمام تھا۔آج کی نشست کے لیے خواجہ فرید سنگت کاخصوصی تعاون بھی حاصل تھا۔معروف کالم نگاراوردانشور جناب بیگ راج نے صدارت کی اور سیدسجادکاظمی مہمان خصوصی تھے۔نشست کے آغازمیں راناتوصیف اقبال نے تلاوت قرآن مجید ،میربلال نے مطالعہ حدیث نبویﷺ،احمدمحمودالزماں نے نعت شریف کلام شاعربزبان شاعرکے مصداق ، اورجناب کمانڈرمحموداقبال نے گزشتہ نشست کی کاروائی پڑھ کر سنائی۔صدرمجلس کی اجازت سے جناب میرافسرامان نے اپنی تحریربعنوان’’مسلمان اقوام متحدہ‘‘سنائی،تحریرمیں پہلے مسلمانوں کی زبوں حالی کاجاں گسل تبصرہ تھااورپھر اتحادامت کے حوالے سے عالمی تنازعات کے لیے مسلمانوں کی اقوام متحدہ کے قیام کامشورہ اوراس کے حق میں دلائل دئے گئے تھے۔تحریرپرتبصرہ کرتے ہوئے کمانڈرمحمود اقبال نے کہاانہیں اس موقف سے شدیداختلاف ہے اور اقوام متحدہ کے طرز میں مسلمان اقوام متحدہ بنانے کی بجائے مسلمانوں میں خلافت کے ادارے کی تاسیس نو ہونی چاہیے۔عطاء الرحمن چوہان صدر تحریک نفاذاردونے اپنی اس تنظیم کاتعارف کرایااور مضمون پر تبصرہ کرتے ہوئے کہاکہ اتحادامت مسلمہ سے ہی دنیامیں امن قائم ہوسکتاہے۔اس کے بعدفاطمہ حسن نے اپنی خوبصورت آواز میں منقبت صحابہ ترنم کے ساتھ سنائی۔صدرمجلس کی اجازت سے نشست کے دوسرے حصے میں سب سے پہلے جناب سبطین رضالودھی نے آنسہ نغمانہ شیخ کاشخصیہ پڑھ کرسنایاجس میں موصوفہ کے علمی و ادبی قدکاٹھ کاتفصیلی ذکر موجود تھا۔جناب ساجد حسین ملک نے اپنے خطاب میں عالمی انسانی تاریخ میں خواتین کے تاریخی مثبت کردارپرروشنی ڈالی۔ڈاکٹرساجد خاکوانی نے انبیاء علیھم السلام کے ہاں خواتین کے مقام و مرتبہ کاذکرکیا۔اس کے بعد شیخ عبدالرازق عاقل نے اپنی تازہ غزل سے محفل میں رنگ بھردیا۔محترمہ نغمانہ شیخ نے سامعین سے خطاب کیااورکہاکہ اسلام آباد میں آکرانہیں بہت اچھالگااورخاص طورپر انہوں نے قلم کاروان کی ادبی نشست میں اپنائیت والے ماحول کی تعریف کی،اس کے علاوہ جن لوگوں نے اس شام کے انعقاد میں اہم کرداراداکیاتھا،انہوں نے ان کابھی خصوصی شکریہ اداکیا ۔انہوں نے اپناایک افسانہ’’تنہائی‘‘بھی سنایاجس میں معاشرے کو ایک اچھوتے رویے کوعنوان بنایاگیاتھا۔آخرمیں صدرمجلس جناب بیگ راج نے پہلے میرافسرامان کی تحریرکو سراہااور ان کے موقف کی تائید کی اورکہاکہ امت مسلمہ کی قیادت مسئلہ بھی اتحادامت سے حل ہوجائے گا۔صدر مجلس نے نغمانہ شیخ کواسلام آبادمیں خوش آمدیدکہااوران کے افسانہ پر صدرمجلس نے چھبتے ہوئے تبصرے کیے اور معاشرے کے بعض کرداروں کو افسانے کے حوالے سے تنقید کانشانہ بنایا۔انہوں نے توقع ظاہر کی کہ نغمانہ شیخ جیسی کہنہ مشق ادیبہ آئندہ بھی ایسے ادب کی تخلیق کرتی رہیں گی جس سے معاشرے کاقبلہ درست رہے ۔صدارتی خطبے کے بعدآج کی نشست اختتام پزیر ہوگئی۔