۔،۔حکومت نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمدسے قاصر کیوں ہے؟‘ جی کیوایم۔،۔
دہشت گردی کے مکمل خاتمہ کیلئے نیشنل ایکشن پلان پرمکمل عملدرآمد یقینی بنایا جائے‘ عرفان سولنگی
بھارت و افغانستان کے ہاتھوں میں کھیلنے والوں ا ور ان کے سرپرستوں کو نشان عبرت بنایا جائے!

کراچی (ا سٹاف رپورٹر)رمضان کے آغاز کیساتھ ہی لاہور میں داتا دربار پر ہونے والے خودکش حملے نے اس بات کو واضح کردیا ہے کہ جب تک نیشنل ایکشن پلان پر اس کی روح کے مطابق بلا تفریق وتخصیص عملدرآمد نہیں کیا جاتا اس وقت تک پائیدارو دیرپا امن ممکن دکھائی نہیں دیتا حالانکہ یہ حقیقت ہے کہ حکومت‘ اپوزیشن اور تمام مکاتب فکر اور شعبہ ہائے زندگی کے لوگ نیشنل ایکشن پلان پر اس کی روح کے مطابق یقینی عملدرآمد کو ضروری سمجھتے ہیں اور اس پر عملدرآمد کے خواہاں بھی ہیں تو پھر اس کی راہ میں کون سی رکاوٹ حاصل ہے کہ حکومت اس پر عمل درآمد سے قاصر ہے۔نیشنل ایکشن پلان پر یقینی و مکمل عملدرآمد ہمارے محفوظ و پر امن مستقبل کی ضمانت ہے اسلئے جب تک نیشنل ایکشن پلان پر اس کی روح کے مطابق عمل درآمد نہیں کیا جاتا‘ سیکورٹی لیپس دور نہیں کی جاتیں اور دہشت گردوں کے سہولت کاروں کو کیفر کردار کو نہیں پہنچایا جاتا، دہشت گردی کی وارداتوں کا یہ مکروہ سلسلہ ختم کرناممکن نہیں ہو گا۔ دہشت گرد ایک مرتبہ پھروطن عزیز میں اپنی مکروہ کارروائیوں کا سلسلہ شروع کر چکے ہیں۔ اب ان کے ساتھ کسی قسم کی کوئی رعایت نہیں ہونی چاہئے۔ ان وطن دشمن عناصر کو جو بھارت اور افغانستان کے ہاتھوں میں کھیل رہے ہیں ا ور ان کے سہولت کاروں کو جو ہمارے اپنے درمیان موجود ہیں جلد از جلد نیشنل ایکشن پلان کے تحت نشان عبرت بنا کر ملک کو دہشت گردی کے ناسور سے محفوظ کرنے کی ضرورت ہے۔ اس کے ساتھ سکیورٹی انتظامات میں موجود خامیوں کو بھی دور کرنے کی ضرورت ہے۔ تاکہ دہشت گرد اپنی کسی کارروائی میں کامیاب نہ ہو سکیں۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے