۔،۔(لوح و قلم تیرے ہیں) ۔ڈاکٹرساجدخاکوانی

منگل مورخہ 18جون2019 بعد نماز مغرب قلم کاروان کی ادبی نشست مکان نمبر1اسٹریٹ 38،G6/2اسلام آبادمیں منعقد ہوئی۔پیش نامے کے مطابق آج کی ادبی نشست میں ”عیدملن مشاعرہ“کااہتمام تھا۔ معروف بزرگ شاعر جناب نسیم سحر نے صدارت کی،جناب وفاچشتی مہمان خصوصی تھے اورسابقہ رکن قومی اسمبلی اورنئے لہجے کی شاعرہ محترمہ بشری حزیں مشاعرے میں مہمان اعزاز کی حیثیت سے شریک تھیں۔نشست کے آغازمیں علی ترابی نے تلاوت قرآن مجیدکی، مطالعہ حدیث نبویﷺجناب طاہربلوچ نے پیش کیا،احمد محمود الزماں نے اپنی نعت بحضوررسول مقبول پیش کی اور جناب طارق محمود نے ایک خوبصورت نعت گاکرسنائی جب کہ شہزادعالم صدیقی نے گزشتہ نشست کی کاروائی پیش کی۔مشاعرے کی نظامت سیدمظہرمسعود کے ذمہ تھی،انہوں نے صدرمجلس کی اجازت سے حسب روایت اپنے کلام سے مشاعرے کاآغاز کیا۔عیدملن کے اس مشاعرے میں شعراء کرام نے اپنی مرضی کی غزلیات و دیگرمنظوم کلام سنائے اور شرکاء سے داد وصول کی۔بعض شعراء نے اپنی مقامی زبان میں بھی کہے گئے اپنے کلام سنائے،خاص طورپر پنجابی کی نظمیں بہت پسند کی گئیں۔شعراء میں شاہد امداد،علی ترابی،ثقلین ضیغم،شاہدمنصورنصرت یاب خان نصرت،طاہرفاروق بلوچ،،فرحانہ علی،طارق محمود،محمدگل نازک،شیخ عبدالرازق عاقل،محمدنعیم جاوید،امجدہرل،جعفرانجم جٹیانہ،اسلم ساگر،ڈاکٹرآصف رضاشیخ اورمہمانوں کے علاوہ احمد محمودالزماں بھی شامل تھے۔مشاعرہ اگرچہ”عیدملن“کے موضوع پرتھا لیکن شعراء نے حمدیہ کلام،نعتیہ کلام اور اپنی بیاض سے دیگرچنیدہ انتخاب بھی حسب موقع سنایا۔دوران مشاعرہ بہت اچھے اشعارپر جہاں بہت داد دی گئی وہاں ہلکے پھلکے جملے بھی شعراء اور شرکاء کے درمیان محو گردش رہے جس سے مشاعرے کی یکسانیت کاماحول متنوع ہوتارہااور اہل محفل محفوظ ہوتے رہے۔مہمانان گرامی میں سے سب سے پہلے سابقہ رکن قومی اسمبلی محترمہ بشری حزین نے اپنا کلام سنایا،انہوں نے اپنی ایک تازہ غزل سنائی جس کو پسند بھی کیاگیااورشرکاء نے اس پرخوبصورت تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ قومی مسائل کاایک حل یہ بھی ہے جمہوری پارلیمان سب اراکین ایسے ہی ادبی ذوق کے حامل ہو جائیں۔جناب وفاچشتی نے اپنا مخصوص طرز کا عارفانہ کلام سنایا اور سرائیکی زبان کی ایک فرمائشی کافی ترنم سے بھی سنائی۔صدر مجلس جناب نسیم سحرنے اپنامنتخب کلام پیش کیا،انہوں نے کہا کہ وہ اس موقع پر خطاب بھی کرنا چاہتے تھے لیکن زیادتی وقت کے پیش نظر اب خطاب نہیں کریں گے اورصرف اپنے منظوم کلام پر ہی اکتفا کریں گے۔صدر مجلس کے بعد مشاعرہ اختتام پزیر ہوگیاتو سیدمظہر مسعود نے صدرنشین قلم کاروان ڈاکٹرساجد خاکوانی کواظہارتشکر کے لیے اختتامی کلمات اداکرنے کی دعوت دی۔انہوں نے شرکاء کا شکریہ اداکیااورکہا کہ یہ نشست ہر منگل جمائی جاتی ہے جس میں مختلف موضوعات پرتحریرں پیش کی جاتی ہیں،انہوں نے سب شرکاء کوان ادبی نشستوں میں بھرپور شرکت کی دعوت دی جس کے ساتھ ہی آج کی ادبی نشست اختتام پزیر ہوگئی۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے