۔،۔ گنے چنے طالبعلموں نے مار بُرگ کے در و دیوار ہلا کر رکھ دیئے۔نذر حسین۔،۔

نذر حسین شان پاکستان ماربُرگ۔ بسلسلہ یک جہتی کشمیر گنے چنے چند طالب علموں نے مار بُرگ میں پُر امن ریلی نکال کر کے یہ ثابت کر دیا کہ پاکستانی قوم، پاکستان کا ہر فرد، خواتین۔، بزرگ، نوجوان، طالب علم اور ماں کی گود میں کھیلنے والا بچہ بھی آزادی کشمیر اور کشمیریوں کی حق خود ارادیت اور انسانی حقوق کے لئے لڑ سکتا ہے۔ مار بُرگ میں بسنے والے 77000رہائشیوں کو بتا دیا کہ چند سٹوڈنٹ مار بُرگ کے لوگوں کو جگا سکتے ہیں اور ان کی کمزور و ناتواں آواز ماربُرگMarburg کے در و دیوار کو ہلا سکتی ہے۔مار بُرگ میں تعلیم حاصل کرنے کی غرض سے رہائشی طالبعلموں نے جب مقبوضہ کشمیر میں کرفیوں کا انعقاد کیا گیا اور آرٹیکل 370 اور A35 کو تبدیل کیا گیا تو کشمیری عوام کے ساتھ یکجہتی کا اعلان کرتے ہوئے مار بُرگ میں ریلی کا اہتمام کرنے کے لئے پاکستان جرمن پریس کے ساتھ مشورہ کیا، پاکستان جرمن پریس نے پورے تعاون کا یقین دلایا جس پر انہوں نے نہایت ہی قلیل مدت میں اجازت لے لی۔13 ستمبر 2019 پاکستان جرمن پریس کلب کے صدر سلیم پرویز بٹ اپنی ٹیم کے ہمراہ جن میں نذر حسین،شبیر احمد کھوکھر پاکستان تحریک انصاف کے مجاہد توقیر بُٹر صابری اور ریاب شاہ کے ساتھ ماربرگ پہنچے تو یہ دیکھ کر خوشی ہوئی کہ پورے منظم طریقہ سے پہلی بار ریلی کا انعقاد کرنے والی انتظامیہ نے بڑے احسن اور پیشہ وارانہ انتظامات کر رکھے تھے ریلی کا آغاز منظم طریقہ سے کیا گیا۔پولیس کی حفاظت میں ریلی مارکٹ پلاٹس Markts platzسے روانہ ہوئی جو پہاڑی پر واقعہ ہے وہاں سے ریلی نعروں کی گونج میں چلتی ہوئی نیچے اُتری ریلی میں نہ صرف پاکستانی تھے بلکہ جرمن۔ترکی۔ بنگالی۔ عربی اور چائنیز نے بمعہ والدین ریلی میں شرکت کر کے مسئلہ کشمیر کی اہمیت کو اُجاگر کر دیا۔طالبعلموں نے رہائشیوں میں فلائیرز بھی تقسیم کئے اور پوچھنے پر لوگوں کو پورے طریقہ سے مطمئن بھی کیا،شرکاء کا مطالبہ تھا کہ مقبوضہ کشمیر میں کرفیو فوری طور پر ہٹایا جائے اور کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جائے،بچوں کا کہنا تھا کہ اگر جرمنی میں جانوروں کی بھی حفاظت کی جاتی ہے تو کشمیر میں بسنے والے مسلمانوں پر بھارت اپنا ظلم و ستم بند کرے اور ان کی قربانیوں کے سلسلہ میں ان کا ان کو حق دیا جائے۔ ۔انتظامیہ امور میں خصوصی طور پر عمر امین۔زوریز فضل۔ خولہ غوری، عادل، شمیل کے علاوہ بھی طالبعلوں نے بھی بھر پور حصّہ لیا-

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے