۔،۔ وادی کشمیر میں ہندووں کی صوفی کارڈ کھیلنے کی کوشش ناکام۔،۔

شان پاکستان مقبوضہ کشمیر۔ بھارتی حکومت نے وادی کشمیر میں صوفی کارڈ کھیلنے کی کوشش کی جس کو ناکامی کا منہہ دیکھنا پڑا، بھارت سے آئے صوفی وفد کا استقبال کشمیریوں نے مودی مخالف نعروں سے کیا، کشمیری عوام نے صوفی وفد کو سری نگر میں حضرت بل کے مزار میں داخل ہونے سے روک دیا، جماعت اسلامی ہند اور سول سوسائٹی نے مقبوضہ وادی کشمیر کی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا۔پہلے مسلسل پابندیوں اور محاصرے سے کشمیریوں کو اپنی قید میں جکڑنے کے بعد اب نریندر مودی مقبوضہ وادی میں صوفی کارڈ کھیل کر آزادی کے متوالوں کی تحریک کو روکنے کی کوشش کر رہے ہیں مگر سری نگر جانے والے صوفی وفد کا استقبال مظلوم کشمیریوں نے بھارت مخالف نعروں سے کیا۔احتجاج کے باعث صوفی وفد حضرت بل کے مزارہر حاضری دیے بغیر واپس لوٹ گیا۔ صوفی وفد کے اراکین کا پریس کانفرنس میں کہنا تھا کہ کشمیر میں زندگی قید ہے اور مشکل کی گھڑی میں ہم کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہیں۔دوسری جانب جماعت اسلامی ہند اوربھارتی سول سوسائٹی کے وفد نے بھی وادی کا دورہ کیا اور پلوامہ میں کشمیریوں سے ملاقاتیں کیں۔ وفد کا کہنا تھا مسلسل پابندیوں کے باعث کشمیری سخت ذہنی اذیت سے گزر رہے ہیں۔جماعت اسلامی ہند اور سول سوسائٹی کے وفود نے بھارتی حکومت سے مطالبہ کیا کہ کشمیر سے فوری طور پر کرفیو اٹھائی جائے۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے