۔،۔ سرخہ کون ہوتا ہے،سُرخہ مزدور ہوتا ہے،سُرخہ کسان ہوتا ہے۔فرخ سہیل گوئندی۔،۔

شان پاکستان لاہور۔ آج پاکستان کے کونے کونے سے طلباء و طالبات نے یک جہتی مارچ نکالے، یہ اچانک طلباء کی راتوں رات کس نے حوصلہ افزائی کی، اس تحریک کو کس نے جگایا، فرخ سہیل گوئندی نے طلباء و طالبات سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آپ سب مبارکباد کے مستحق ہیں،ان کا کہنا تھا کہ گذشہ بیالیس سالوں سے لاہور کی سڑکوں پر جلوس نکالتا رہا ہوں ان بیالیس سالوں میں یہ پہلا جلوس ہے جس کو نوجوان کمیونٹی نے لیڈ کیا اور یو بھی بتاتا چلوں کہ اس جلوس کی کون سی دو خوبصورتیاں نظر آ رہی ہیں یہ کن دو خوبصورتیوں کا حامل ہے۔historically تاریخی لحاظ سے کہ پنجاب کے دل لاہور میں۔ پنجابیوں، سندھیوں، پشتونوں،بلوچیوں اور کشمیریوں نے مل کر جلوس نکالا ہے یہ اس بات کی علامت ہے کہ۔ پاکستان میں دو قومیں بستی ہیں ایک قوم وہ جو محکوم ہے اور ایک وہ جو حاکم ہے، ایک وہ جو پیداور کرتے ہیں، ایک وہ جو پیداوار لوٹتے ہیں۔ایک وہ جو پچانوے فی صد ہیں، ایک وہ جو پانچ فی صد ہیں، طلباء کی دوسری historically contribution تاریخی طور پر شراکت کہ اکیاون سال1968 کے بعد پاکستان میں بایاں بازو، ترقی پسند ایک نئی تحریک جو جنم دینے جا رہے ہیں۔ مجھے ایک بار پاکستان کے بہت بڑے طاقت ور شخص نے پوچھا ٭یہ سُرخے کیا ہوتے ہیں، میں نے اسے جواب دیا سُخہ مزدور ہوتا ہے،سُرخہ کسان ہوتا ہے، سُرخہ محنت کش طالب علم، جب سُرخے جاگیں گے تو پاکستان کے۔ محکوم طبقہ جاگیں گے۔ میں یہ کہنا چاہوں گا کہ پاکستان میں نئی تحریک کا آغاز ہو چکا ہے اس کو دانش مندی، منطق۔حکمت عملی سے آپ نے طلباء کی یونین کی بحالی بھی کرنی ہے، طلباء کے حقوق کی جنگ بھی لڑنی ہے، انہوں نے عمران خان کا نام لے کر کہا عمران خان تم مجھے اچھی طرح سے جانتے ہومیں تمہیں وہ دن یاد کروا دوں جس دن تمہارے گریبان سے تمہیں پکڑا تھا جمیعت کے کردوں نے تم اس جمیعت کو جانتے ہو کیسے کی تھی اب اگر ایسی غنڈہ گردی ہوئی تو طالب علم نہیں لاہور کے ڈیڑھ کروڑ شہری جلوس کی شکل میں، اسلامی جمیعت طلباء کی غنڈہ گردی اور اسلحہ برداری کے خلاف آئیں گے، عمران خان دوسرا مطالبہ یہ ہے کہ پانچ فی صدربجٹ میں کیا ہوتا ہے تعلیم کی ایمرجنسی لگاوُ لوگوں پر تعلیم کو لازمی اور مفت قرار دو، جب تعلیم یافتہ پاکستان ہو گا۔ یاد رکھو بے زمین کو زمین دے دو، بے تعلیم کو تعلیم دے دو پھر یہ خود پاکستان کو بدل دیں گے۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے