۔،۔ آب و ہوا کا بحران انسانی تہذیب کے لئے ایک حقیقی خطرہ ہے۔نذر حسین۔،۔

شان پاکستان جرمنی نذر حسین۔ بات چلی تھی سویڈن کی16 سالہ طالبہ گریٹا تھونبرگ Greta Thunbergسے جس نے سویڈش پارلیمنٹ schwedischen Parlament کے سامنے 20اگست2018کو پہلی بار ماحولیاتی آلودگی کے خلاف احتجاج کیا تھا اپنی ایک اکیلی آواز اُٹھائی تھی۔آج 16 سالہ طالبہ گریٹا تھونبرگGreta Thunbergکے پیچھے نہ صرف 27000سے زیادہ وہ بھی صرف جرمن بولنے والی دنیا میں سائنسدان کھڑے ہیں بلکہ پوری دنیا کے طلباء و طالبات کھڑے ہیں نہ صرف یورپ بلکہ پوری دنیا میں تحریک کو دیکھا جا سکتا ہے پوری دنیااس تحریک کے مطالبات کی حمایت کرتے ہیں، ان کا بھی کہنا ہے کہ ایسے مستقبل کی تعمیر کیوں کی جائے جو عنقریب ختم ہو جائے گی گا جس کی موجودگی سوالیہ نشان بنتی جا رہی ہے۔اس سوال کا جواب یہ تحریک ہے ہماری مانگ ہے ایک ایسی پالیسی کی جو آب و ہوا کے بحران کی پیمائش پر پورا اترتی ہو ہمارے پاس اپنے مقاصد کے حصول کے لئے 10سال ہیں، یہ تحریک جب یورپ میں پہنچی تو طلباء و طالبات نے جمعہ Friday کا دن چنا۔ پھر کیا تھا ہر جمعہ کے دن ریلیاں نکالی جانے لگیں جرمن سیاست دان بوکھلا گئے سکولوں میں اعلان کئے گئے کہ بغیر کسی وجہ سے اگر طلباء سکول سے غیر حاضر ہوں گے تو قانونی کاروائی کی جائے گی کئی طلباء و طالبات پر سکول سے غیر حاضر ہونے پر جرمانے بھی لگائے گئے کولون میں تحریک نے بچوں پر لگنے والے جرمانے ادا کئے۔ ہڑتالیں اور ریلیاں دن بدن زور پکڑتی چلی گئیں، حال ہی میں 29. November 2019 کو عالمی سطحglobal پر ریلیاں نکالی گئیں صرف فرینکفرٹ میں 10000سے زائد افراد نے ریلی میں حصّہ لیا،فرینکفرٹ کے ارد گرد ہر طرف پولیس چاک و چوبند کھڑی تھی ان کو اس بات کا ڈر تھا کہ چند شر پسند لوگ ہنگامہ آرائی کریں گے کیونکہ 28 اگست 2019 کوپہلے ہی کرونبَرگKronberg میں موجود جاگور Jaguar،آسٹون ماٹین Aston Martin اور لینڈ روور Landroverکار شُو روم کے اندر اور باہر luxus عیش و آرام دہ کھڑی گاڑیوں کو تباہ و برباد کر دیا گیا تھا پولیس رپورٹ کے مطابق ملیینزMillion کا نقصان کیا گیا تھا۔ یہ تو پوری دنیا میں دیکھا جا سکتا ہے کہ چند سال قبل نومبر اور دسمبر میں برف باری شروع ہوجاتی تھی نہ صرف پہاڑوں بلکہ شہروں میں بھی برف پڑی نظر آتی تھی شاید آپ کو علم نہ ہو 1965میں دریائے مائینز فرینکفرٹ میں بہنے والا دریا کئی دن تک جما رہا بچے دریا پر سکیٹنگ کرتے دکھائی دیتے تھے پولیس کے مطابق ڈیڑھ دو میٹر تک پانی برف بن چکا تھا، پوری دنیا میں میٹھے پانی کے ذخائر کم ہوتے جا رہے ہیں، کئی ملکوں میں گرمیوں میں گاڑیاں دھونے پر بھی پابندی عائد کر دی جاتی ہے جرمنی میں بھی ایسے طریقہ اختیار کئے جاتے ہیں کہ پانی فلٹر کر کے دوبارہ گاڑیاں دھونے کے لئے استعمال کیا جائے۔ جگہ جگہ کوڑا کرکٹ پھینکنے پر پابندیاں لگائی جا رہی ہیں، پلاسٹک کے تھیلوں کی جگہ ہمارے آباوُ اجداد کی طرح کپڑوں کے تھیلے عام دکھائی دیئے جا رہے ہیں۔ گرمی میں اضافہ ملکوں میں خشک سالی،سموک الارم Smoke Alarmکے خطرناک اثرات، گلیشیئر Glasherکا پگھلنا سب ماحولیاتی آلودگی کے سبب ہو رہا ہے۔Sweden,Berlin,Frankfurt,Erfurt,Munich,Leipzig,Bern, Genf, Wien,Sydney,,Augsburg,dijon,

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے