۔،۔ پی ایس پی سیاسی کارکنان کی نظریاتی تربیت گاہ ہے:الطاف شاہد۔،۔
ہمارے پارٹی چیئرمین سیّدمصطفی کمال کاحالیہ دورلاہورانتہائی کامیاب رہا

پاک سر زمین پارٹی برطانیہ کے صدرچوہدری محمد الطاف شاہد نے کہا ہے کہ پاک سرزمین پارٹی سیاسی کارکنان کی نظریاتی تربیت گاہ ہے۔ماضی میں اقتدارکیلئے نوجوانوں کااستعمال اوراقتدارمیں آنے کے بعدان کااستحصال ہوتا رہا،سیّد مصطفی کمال نے نوجوانوں کااپنی صلاحیتوں کے اظہاراورقومی سیاست میں اپنانام ومقام بنانے کیلئے پی ایس پی کی صورت میں ایک بہترین پلیٹ فارم مہیاکردیا۔سیّدمصطفی کمال کی قیادت میں پی ایس پی کو چاروں صوبوں میں پسندکیاجاتا ہے۔پی ایس پی کے بانی ومرکزی چیئرمین سیّدمصطفی کمال کاحالیہ دورلاہورانتہائی کامیاب رہا۔لاہورائیرپورٹ پرمعمارکراچی کاشایان شان استقبال کیا گیا۔وہ پارٹی آفس میں ایک اعلیٰ سطحی اجلاس سے خطاب کررہے تھے۔سینئر نائب صدر مرزافیصل محمود،سابق جنرل سیکرٹری غلام نبی عامر،جوائنٹ سیکرٹری عمران خان نے بھی اجلا س سے خطاب کیا اوریوم تاسیس کی مرکزی تقریب کے کامیاب انعقادکیلئے تجاویزدیں۔ چوہدری محمد الطاف شاہد نے مزید کہا کہ عمران خان نے بلے بازی کرتے ہوئے اتنے رنزنہیں بنائے جتنی بار موصوف نے سیاست کرتے ہوئے” یوٹرن” لیا۔ ہماری ریاست اس قسم کی منفی سیاست کی متحمل نہیں ہوسکتی،عمران خان ناقابل اعتماد ہیں۔ دنیا بھرمیں مسلمان تختہ مشق بنے ہوئے ہیں،حیوانوں کے حقوق کیلئے سرگرم مسلمانوں کے حقوق کی پامالی کیخلاف آوازکیوں نہیں اٹھاتے۔اسرائیل کومعصوم فلسطینیوں کے خون سے ہولی کھیلنے کاپرمٹ کس نے دیا۔انہوں نے کہا کہ بھارت بالخصوص مقبوضہ کشمیر آج بھی مسلمانوں کیلئے مقتل گاہ بناہوا ہے۔ بھارت اورفلسطین میں مسلمانوں کے قتل عام پر یونائیٹڈ نیشن،برطانیہ اوریورپ کی خاموشی نے انسانیت کاسرشرم سے جھکادیا۔اسلام کے ساتھ تعصب کی بنیادپرمغرب والے مسلمانوں کے انسانی حقوق کااحترام نہیں کرتے۔اسرائیل اوربھارت کاوجود امن کیلئے زہرقاتل جبکہ انسانیت کیلئے ایک بوجھ ہے،بھارت میں مسلمانوں سمیت کوئی اقلیت محفوظ نہیں۔ بھارتی حکمرانوں نے پاکستان کیخلاف زہراگلنا اورمسلمانوں کے خون سے ہولی کھیلنا اپنا حق اورفرض سمجھ لیا ہے۔ بھارت کا بدنام زمانہ مودی مسلمانوں کیلئے ایک موذی بیماری بناہوا ہے۔بھارت کے بیشتر انتہاپسندہندوسیاستدان مسلمانوں کے خون کے پیاسے ہیں اور وہ اپنے سیاسی مفادکیلئے فسادات کوہوادینے میں کوئی کسرنہیں چھوڑتے۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے