-,-سپین کے وزیرِ اعظم کی مشکل، ایمرجنسی میں توسیع کی مخالفت-,-

سپین کے وزیرِ اعظم پیدرو سانچیز نے پارلیمان سے کہا ہے کہ وہ ملک میں ہنگامی حالت کو دو ہفتے کے لیے مزید بڑھا دے۔ تاہم ان کے اس اقدام پر حزبِ اختلاف کی جماعتوں نے کڑی تنقید کی ہے۔وزیرِ اعظم سانچیز نے پارلیمان کو بتایا کہ برادریوں کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے توسیع کی بڑی سخت ضرورت ہے کیونکہ کورونا وائرس کا خطرہ ابھی گیا نہیں ہے۔انھوں نے وبا کے متعلق اپنی حکومت کے ردِ عمل کا دفاع کیا، لیکن سپین کے شہریوں سے یہ بھی کہا کہ اگر ان کی حکومت سے کوئی کوتاہیاں ہوئی ہوں تو وہ انھیں معاف کر دیں۔
حکومت چاہتی ہے ہنگامی صورتِ حال میں 7 جون تک کے لیے توسیع کر دی جائے۔ اس میں اب تک چار مرتبہ پہلے بھی توسیع کی جا چکی ہے اور اتوار کو معیاد پوری ہونے کے بعد یہ پانچویں مرتبہ ہو گا کہ اس میں توسیع کی جائے گی۔سپین کی اہم حزبِ اختلاف کی جماعت پیپلز پارٹی نے کہا ہے کہ وہ توسیع کے لیے ووٹ نہیں ڈالے گی، جس سے پارلیمان میں اس کی منظوری میں مشکل ہو سکتی ہے۔
پارٹی کے رہنما پابلو کیساڈا نے قانون دانوں سے ایک خطاب میں کہا کہ سپین میں روزانہ کورونا وائرس سے ہونے والی اموات ابھی بھی جہاز کے حادثے جتنی ہیں۔ انھوں نے وزیرِ اعظم کے منصوبے کو ناکام قرار دیا۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے