۔،۔ فرینکفرٹ اور اردگرد کے علاقوں میں پاکستانی کمیونٹی نے بڑے جوش و خروش سے عید منائی۔نذر حسین۔،۔

شان پاکستان جرمنی فرینکفرٹ۔جرمنی کے شہر فرینکفرٹ، آفن باخ،آشافن برگ کے علاقوں میں خصوصی طور پر پاکستانی کمیونٹی نے بڑے منظم طریقہ سے عید الفطر کی نماز ادا کی، اتنے مشکل حالات کا سامنا کرتے ہوئے بڑی بڑی تنظیموں نے جن میں ترکی اور مراکش کی کمیونٹی شامل ہیں اپنی مساجد کو بند رکھا جبکہ پاکستانی کمیونٹی نے بہت منظم طریقے اور دلیری سے سے نماز عید الفطر ادا کی، مساجد کے باہر انتظامیہ کے افراد کھڑے تھے تمام افراد جو مساجد میں تشریف لائے انہوں نے عالمی وبا کورونا وائرس سے بچاوُ کی تمام احتیاطی تدابیر کو مدنظر رکھتے ہوئے، ماسک پہنے اپنی اپنی جائے نماز لئے مساجد میں تشریف لائے، مساجد کے باہر کھڑے افراد نے آنے والے نمازیوں کے ہاتھوں پر جراثیم کش سپرے کیا جن افراد کے پاس ماسک نہیں تھا ان کو باقاعدہ طور پر ماسک پیش کیا گیا، قانونی کاروائی کے تحت آنے والے تمام افراد کے ٹیلیفون نمبر اور ایڈریس درج کئے گئے اس کے بعد مسجد میں باقاعدہ طور پر فاصلہ برقرار رکھا گیا۔ حسن نثار کا کہنا کہ یہ قوم نہیں ہجوم ہے ناں ناں ناں اسی پاکستانی قوم نے یورپین افراد کو بتا دیا ہے کہ وقت آنے پر ہم تمام قانونی کاروائیاں پوری کرتے ہوئے نظم و ضبط کا مظاہرہ تم سے بہتر کر سکتے ہیں۔، پاک محمدی کے امام احسان الرحمن نے شان پاکستان سے بات کرتے ہوئے فرمایا کہ قانون کی پیروی کرتے ہوئے مسجدوں میں پانچوں وقت کی آذانیں بھی ہو رہی ہیں،لوگ نماز ادا کرنے بھی آ رہے ہیں، جو کچھ سرکار نے قائدہ اور ضابطہ مقرر کیا ہے اس کی پابندی کرتے ہوئے ہر شخص آ سکتا ہے، ہم اس ملک کے شہری ہیں ہمیں کسی سے کوئی شکایت نہیں ہے اس لئے کہ ہمارے اوپر کوئی پابندی نہیں لیکن ہمارا فرض بنتا ہے اور ہم پر لازم ہے کے ضابطے کی پابندی کریں۔ ادارہ منہاج انٹرنیشل نے چرچ کے حال میں نما زعید الفطر کا اہتمام کیا تھا وہاں پر بھی لوگ قطار میں اپنی باری آنے کا انتظار کر رہے تھے،حال کے اندر بھی قانون اور فاصلہ کا احترام کرتے ہوئے جائے نماز بچھا کر نظم و ضبظ کا مظاہرہ کرتے ہوئے نماز پڑھائی گئی چرچ کے باہر کھڑے جرمن سے جب شان پاکستان کے ایڈیٹر نے پوچھا کہ کیا آپ ہمارے نظم ضبط کو دیکھتے ہوئے بتا سکتے ہو کہ آپ کو کیسا لگ رہا ہے،کیا آپ کو ابھی تک کوئی مشکل پیش آئی ہے تو ان کا کہنا تھا کہ نہیں چرچ کے اہتمام اور انتظام کی پوری ذمہ داری محمد اقبال خان کی تھی جو انہوں نے احسن طریقہ سے نبھائی۔عیسائی اسلامی مکالمہ کے شعبہ سے تعلق رکھنے والی جرمن خاتون ڈاکٹر بریگیٹا ساسن Dr.Brigitta Sassinنے پوری دنیا میں بسنے والے مسلمانوں کو عید مبارک کہا۔ان کا کہنا تھا کہ میں کیتھولک ہوں میرا مقصد مسیحی برادری اور مسلمان برادری کے مابین اچھے تعلقات کی کوشش ہے، ڈاکٹر بریگیٹا نے انتظامیہ کو پادری کی طرف سے عید کے موقع پر لکھا ہوا پیغام بھی دیا ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم ایک دوسرے کے ساتھ اپنے تعلقات بڑھا کر ایک دوسرے کے قریب آ سکتے ہیں تا کہ یہ دوریاں دور کی جا سکیں۔۔ڈائریکٹر ادارہ منہاج فرحت شاہ کا کہنا تھا کہ آج کا دن ہمارے لئے بہت خوشیوں کا دن ہے کہ آج پوری مسلم کمیونٹی نے اجتماعی نماز عید الفطر ادا کی ہے،آج کے موقع پر بالخصوص مسیحی برادری ڈاکٹر بریگیٹا ساسن Dr.Brigitta Sassinکا دل کی اتھاہ گہرائیوں سے شکریہ ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے ہمیں آج چرچ کے حال میں نماز پڑھانے کی اجازت دی یہ بہت بڑا تعاون تھا میں سمجھتا ہوں ہمارے دلوں اور ذہنوں میں وسعت ہونی چاہیئے،ہمیں ایک دوسرے کو برداشت کرنے کا مادہ پیدا کرنا چاہیئے۔ عید کے موقع پر سب سے بڑا پیغام بھی یہی ہے کہ ہم ایک دوسرے کے ساتھ خوشیاں بانٹیں۔۔اس کے علاوہ پاک دارالسلام، مسجد غوثیہ۔ مسجد الفلاح آفن باخ، مدنی مسجد اور مسجد بلال آشافن برگ میں بھی عید کی نماز ادا کی گئی۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے