۔،۔4 اگست کابینہ میں ماسک کی ضرورت کے خاتمے کے بارے میں تباولہ خیال۔نذر حسین۔،۔

شان پاکستان جرمنی برلن۔ اپریل 2020 کے بعد سے پورے جرمنی میں ماسک کی ضرورت کو ضروری قرار دیا گیا ہے کورونا قانون میں نرمی کے بعد ابھی تک ماسک برقرار ہے کچھ وفاقی ریاستیں قواعد و ضوابط میں ڈھیل پیدا کرنا چاہتی ہیں جس کو مد نظر رکھتے ہوئے بحث میں تیزی دکھائی دی جا رہی ہے۔ کئی ریاستیں خرید و فروخت کو مد نظر رکھتے ہوئے ماسک کی ضرورت کو ختم کرنے پر غور کر رہی ہیں میکلن برگ فور پومہMecklenburg-Vorpommernsکے وزیر برائے اقتصادیات ہیری گلاوے۔سی۔ڈی۔یو۔ Harry Glawe نے ویلٹ ایم سونٹاگ “Welt am Sonntag”. کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر انفکشن کی شرح میں بہت حد تک کمی آ جانے کے بعد خرید و فروخت میں نقاب کی ضرورت کو برقرار رکھنے کی کوئی وجہ نظر نہیں آتی۔ ان کا فرمانا تھا کہ شویرین Schwerin کی کابینہ میٹنگ میں 4. اگست کو اپنے اجلاس میں نقاب کو ختم کرنے کا فیصلہ کیا جائے گا، کاروباری حضرات کی اپنی تجارت کے حوالہ سے بے صبری کو بخوبی سمجھ سکتا ہوں جبکہ اصولی طور پر صحت کے اصولوں کو مد نظر رکھتے ہوئے ہمیں فاصلہ کو برقرار رکھنا ہو گا۔ پوری جرمنی سے ہمارے ہاں کورونا وائرس کے انفیکشن سب سے کم ہیں۔ جرمن ٹریڈ ایسوسی ایشن (ایچ۔ڈی۔ای)کے منیجنگ ڈائریکٹر اسٹیفن جنتھ Stefan Genth نے اتوار کو اپنے انٹرویو میں کہا ہے کہ دکان داروں اور خورد ہ نوش فروشوں کے لئے اچھا ہے اگر صحت کی پالیسی میں نرمی لاتے ہوئے جلد سے جلد نقاب کی ضرورت کو ختم کر دیا جائے اس بات کا فیصلہ سیاستدانوں اور میڈیسنحفظان صحت اداروں کو کرنا ہو گا کہ کب اور کہاں اور کن خطوں میں ممکن ہے۔ جرمنی کی سوسائٹی حفظان صحت کے صدر مارٹن ایکسنرMartin Exner کا کہنا تھا کہ ذاتی طور پر مجھے اس میں مشکلات نظر آ رہی ہیں۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے