۔،۔ نظریہ ضرورت کی سیاست ریاست کوراس نہیں آئے گی: تنویر خان۔،۔
کپتان ریاستی نظام تبدیل اوراپنے انتخابی وعدے وفا کرنے میں ناکام رہا

انٹرنیشنل ہیومن رائٹس موومنٹ کے مرکزی سینئر نائب صدر تنویرخان نے کہا ہے کہ نظریہ ضرورت کی سیاست ریاست کوراس نہیں آئے گی۔سینیٹ کے انتخابات کے نام پرہونیوالی عارضی اصلاحات کی آڑ میں حکمران اپنے نجی سیاسی مفادات کی حفاظت کررہے ہیں۔ عوام ورلڈ بنک اورآئی ایم ایف کے رحم وکرم پر ہیں۔ کپتان ریاستی نظام تبدیل اوراپنے انتخابی وعدے وفا کرنے میں ناکام رہا۔ ہم اپنے ہم وطنوں کی فلاح اور حکومت کی اصلاح کیلئے بار بار حکمرانوں کی لگام کھینچتے رہیں گے۔ وفاقی وصوبائی حکمرانوں کوعوام کے حقوق پرشب خون مارنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔شہرقائدؒ سمیت پاکستان کے طول وارض میں پاکستانیوں کی معاشی بدحالی کے پیچھے حکمرانوں کی نااہلی کاہاتھ ہے۔تبدیلی سرکار کا دوراقتدارعوام نہیں صرف کپتان اوراس کے اے ٹی ایم کارڈز کاراس آیا،موصوف کواب اپناایک بھی انتخابی وعدہ یادنہیں۔ وفاق اورصوبوں کے انتظامی معاملات پر بھی وزیراعظم عمران خان اوروز رائے اعلیٰ نے اب تک پوائنٹ سکورنگ کے سواکچھ نہیں کیا۔اپنے ایک بیان میں تنویرخان نے مزید کہا کہ گیارہ پارٹیوں کے اپوزیشن اتحاد کے منفی طرز سیاست سے ملک میں سیاسی عدم استحکام اوربدترین انتشارپیداہوا۔عمران خان نے نیاپاکستان بناتے بناتے عوام سے پراناپاکستان بھی چھین لیا۔انہوں نے کہا کہ نظام کی تبدیلی تک عوام کی حالت زارنہیں بدلے گی۔وفاقی کابینہ میں بار بار تبدیلی کپتان کی نااہلی کاشاخسانہ ہے۔انہوں نے کہا کہ ہرچندماہ بعد وفاقی یاصوبائی وزراء کے قلمدان تبدیل کرنے سے کچھ نہیں ہوگا،وزیراعظم عمران خان کواپنامائنڈسیٹ بدلنا ہوگا۔گیارہ پارٹیوں کااتحاد بھی اقتدار کے پیچھے دوڑرہا ہے،پیپلزپارٹی اورمسلم لیگ (ن) کے پاس بھی تبدیلی کیلئے کوئی واضح ایجنڈا نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ پی ڈی ایم کی قیادت کے پاس کوئی متبادل پروگرام نہیں اورنہ نااہل حکمران طبقہ عوام کوڈیلیور کرسکتاہے۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے