۔،۔ ایوانوں میں کوئی عوامی ایشوز پربات نہیں کرتا: شہزادحسن وٹو۔،۔
حکمرانوں نے اپنی نااہلی چھپانے اور عوام کی آوازدبانے کیلئے مسائل کا جال بچھادیا

انٹرنیشنل ہیومن رائٹس موومنٹ کے مرکزی نائب صدر میاں شہزادحسن وٹوایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ منتخب ایوانوں میں کوئی عوامی ایشوز پربات نہیں کرتالیکن نمائندے ہوشربا مراعات سے مستفید ہورہے ہیں۔اس استحصالی نظام کا عوام کے خون پرپلناایک بڑاسوالیہ نشان ہے۔ حکمرانوں نے اپنی نااہلی چھپانے اور عوام کی آوازدبانے کیلئے مسائل کا جال بچھادیا۔محرومیوں کے مارے بیچارے عوا م کی چیخوں سے چوروں کی صحت پرکوئی فرق نہیں پڑتا۔مرکزاورصوبوں کے حکمران ہم وطنوں کو محض طفل تسلیاں دے رہے ہیں۔نام نہاد تبدیلی کے علمبرداروں اوران کے پیشرو بدعنوان حکمران طبقہ کی سوچ میں کوئی فرق نہیں ہے۔حکومت اوراپوزیشن دونوں میں سے کوئی بھی عوام کی نمائندگی کرنے کیلئے تیار نہیں۔مہنگائی کے بوجھ سے نجات کیلئے عوام کی دوہائی کون سنے گا۔زیادہ ترارکان اسمبلی کواپنے اپنے قائدین کی قصیدہ خوانی کے سواکوئی کام نہیں۔وہ ایک تقریب سے خطاب کررہے تھے۔ میاں شہزادحسن وٹوایڈووکیٹ نے مزیدکہا کہ حکومت اوراپوزیشن کی طرف سے ایک دوسرے کی ذاتیات پرحملے ناقابل فہم اورناقابل معافی ہیں۔ وزیراعظم عمران خان کاعوامی اجتماعات سے خطاب کرتے ہوئے دوسروں کامذاق اڑانااوران کی تضحیک کرنا آئینی منصب کے شایان شان نہیں۔انہوں نے کہا کہ خدارا2021ء میں 1990ء کی دہائی والی سیاست نہ دہرائی جائے ورنہ ایوانوں میں بیٹھے سیاستدانوں کی ساکھ راکھ کاڈھیربن جائے گی۔عمران خان کوسیاست کی سوجھ بوجھ نہیں،وہ اپنے اتحاد ی چوہدری برادران سے کچھ سیکھیں۔انہوں نے کہا کہ ہم قومی پرچم تلے نوجوانوں کو منظم اورموثرانداز سے پاکستانیت کادرس دے رہے ہیں۔مالیاتی سیاست شروع دن سے ریاست کیلئے بوجھ ہے،ملک بچانے اوراسے معاشی طاقت بنانے کیلئے نظریاتی سیاست کوفروغ دیناہوگا۔انہوں نے کہا کہ مادروطن کے چاروں صوبوں کے لوگ ریاست کی سا لمیت کیلئے مالیاتی سیاست کومستردکرتے ہوئے ہرسطح پر نظریاتی سیاست کوفروغ دیں۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے