-,- بھارت گولی اورگالی کی زبان میں بات نہ کرے: محمدیونس ملک-,-
کشمیریوںکی تحریک آزادی کچلنے کیلئے بھارت نے کالے قانون کاسہارالیا

انٹرنیشنل ہیومن رائٹس موومنٹ کے صوبائی صدر پنجاب محمدیونس ملک نے کہا ہے کہ مودی کاحالیہ مکتوب ایک سراب ہے،یہ سنجیدہ نہیں۔جموں وکشمیر کی2020ءوالی آئینی حیثیت کی بحالی تک بھارت کے ساتھ تجارت کاکوئی جواز نہیں۔بھارت کے پاس منافقت کے سواکچھ نہیں،مودی سرکار گولی اورگالی کی زبان میں بات نہ کرے، پاکستان کے صبر وتحمل کاامتحان نہ لیا جائے۔ بھارت نے کشمیریوںکی تحریک آزادی کچلنے کیلئے اب تک کئی کالے قانون بنائے ہیں،مقتدرقوتوں کو ان متنازعہ قوانین کے سدباب کیلئے اپناکرداراداکرناہوگا۔وہ ایک استقبالیہ سے خطاب کررہے تھے۔ محمدیونس ملک نے مزید کہا کہ بھارتی جمہوریت شیطانی آمریت سے بدترہے،شدت پسندنریندرمودی بیگناہ کشمیریوں کے خون سے ہولی کھیلنا بندکردے کیونکہ ان کاروشن مستقبل پاکستان کے ساتھ ہے۔بھارت دنیاکی سب سے بڑی انتہاپسنداورمتعصب ریاست ہے جہاں مسلمانوں سمیت کوئی اقلیت محفوظ نہیں۔ بھارت میں گائے سمیت کئی زندہ انسانوں اور حیوانوں کی پوجاہوتی ہے جبکہ دوسرے مذاہب سے تعلق رکھنے والے انسان شب وروز تشد د،تعصب اورتوہین کانشانہ بن رہے ہیں۔ عمران خان اپنے بھارتی ہم منصب نریندرمودی کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کربات کریں۔انہوں نے کہا کہ حکمرانوں کابھارت کے ساتھ تجارت کایوٹرن ناقابل برداشت ہے۔انہوں نے کہا کہ تبدیلی سرکار کی داخلی وخارجی پالیسیاں قومی مفادات سے مطابقت نہیں رکھتیں۔اگرپاکستان میں حکومت نہ بدلی توخدانخواستہ پاکستان کاجغرافیہ تبدیل ہوجائے گا۔انہوں نے کہا کہ تکمیل پاکستان اورجنوبی ایشیائمیں پائیدارامن کیلئے مقبوضہ کشمیر کوبھارت کے غاصبانہ قبضہ سے چھڑاناہوگا۔انہوں نے کہا کہ بھارتی حکومت باآسانی کشمیر سے دستبردارنہیں ہوگی،سفارت کاری سمیت دشمن کوہرمحاذپر دوٹوک جواب دیاجائے۔پاکستان میں مستقل،موزوں،موثراورمتحرک وزیرخارجہ کی کمی شدت سے محسوس کی جارہی ہے۔انہوں نے کہا کہ عمران خان کی صلاحیتیں سوالیہ نشان ہیں،انہیں بہتراوربروقت نتائج کیلئے اپنے اختیارات تقسیم کرناہوں گے۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے