۔،۔ بھارت میں نمازیوں پرتشدد بربریت ہے: محمدناصراقبال خان۔،۔
پولیس کے بیسیوں باوردی اہلکاروں نے دانستہ بہیمانہ تشدد کانشانہ بنایا

انٹرنیشنل ہیومن رائٹس موومنٹ کے مرکزی صدر محمدناصراقبال خان نے کہا ہے کہ بھارت میں نمازیوں پرتشدد بربریت ہے۔کشمیریوں کی نسل کشی پرعالمی ضمیر کی خاموشی سانحہ سے بڑا سانحہ ہے۔کیا بھارت پر اقوام متحدہ کے کسی ضابطہ اخلاق کااطلاق نہیں ہوتا۔نمازیوں کومسجد سے باہر آتے وقت بھارتی پولیس کے بیسیوں باوردی اہلکاروں نے دانستہ بہیمانہ تشدد کانشانہ بنایا۔نہتے نمازیوں کیخلاف پولیس گردی ناقابل برداشت ہے۔انتہاپسندنریندرمودی کیا چاہتا ہے، مقتدرقوتیں کیوں خاموش ہیں۔ ہم بھارت کی اس بدترین فسطائیت کی شدید مذمت اورعالمی ضمیر سے مودی سرکار کیخلاف راست اقدام کامطالبہ کرتے ہیں۔ بھارت میں مسلمان اورسکھ اقلیت کے لوگ مسلسل اذیت کی کیفیت میں ہیں،انتہاپسندمودی نے بھارت میں امن اورانسانیت کی نابودی کابیڑااٹھایا ہے۔ اپنے ایک بیان میں محمدناصراقبال خان نے مزید کہا کہ بھارت کی مسلم کش مودی سرکار سے انسانوں اوربالخصوص مسلمانوں کے بنیادی حقوق اوراخلاقی قدروں کی پامالی کاحساب لیاجائے۔بھارت میں بندوق کے بل پرمسلمانوں کوآزادانہ تجارت کرنے سے بھی روکاجارہا ہے، بھارت میں پرتشدد واقعات اورانسانیت کے ساتھ پیش آنیوالے سانحات دیکھتے ہوئے اس ریاست کوزمین پرجہنم کہنا بیجا نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ تہتر برسوں بعد بھی بھارتی مسلمانوں کی بھارت کے ساتھ وفاداری کوشک کی نگاہ سے دیکھنا اوران کے ساتھ تعصب سے پیش آناانتہائی شرمناک ہے۔ مودی کے مسلسل عاقبت نااندیشانہ اور انتہاپسندانہ اقدامات سے مسلمانوں کیلئے بھارت میں گھٹن مزید بڑھ گئی، بھارتی مسلمانوں کو معاشی اورسماجی طورپردیوار کے ساتھ لگانے جبکہ انہیں زندہ درگورکرنے کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔

ایڈیٹرچیف نذر حسین کی زیر نگرانی آپ کی خدمت میں پیش ہے