۔،۔ جرمنی کے شہر فرینکفرٹ میں عظیم الشان شُہدائے کربلا کانفرنس کا انعقاد۔ نذر حسین۔،۔

٭ عظیم الشان شُہدائے کربلا کانفرنس میں عالمی مبلغ اسلام فخر سادات پیر طریقت رہبر شریعت پیر سید منور حسین جماعتی سجادہ نشین آستانہ عالیہ علی پور سیداں شریف۔ آل نبی اولاد علی عالمی مبلغ اسلام نامور مذہبی سکالر پیر سید صاجزادہ حسنات احمد بخاری زیب سجادہ آستانہ عالیہ آل رسول بلجیئم اور عالم نبیل فاضل جلیل مبلغ یورپ خطیب اعظم جرمنی حضرت علامہ مولانا عبد اللطیف چشتی الازہری فاضل بھیرہ شریف کا خصوصی خطاب٭اگر عالم دین ولی نہیں تو پھر کوئی بھی ہلی نہیں ہے کیونکہ اللہ جاہلہں کو اپنا دوست نہیں بناتا۔یہ فرمان ہے امام شافیؒ کا٭

شان پاکستان جرمنی فرینکفرٹ۔ الحاج افتخارالدین ارشد کے زیر نگرانی، ادارہ پاک دارالسلام فرینکفرٹ اور پاسبان ختم نبوت جرمنی کے زیر اہتمام عظیم الشان شُہدائے کربلا کانفرنس کا انعقادکیا گیا جس میں خصوصی خطاب کے لئے عظیم الشان شُہدائے کربلا کانفرنس میں عالمی مبلغ اسلام فخر سادات پیر طریقت رہبر شریعت پیر سید منور حسین جماعتی سجادہ نشین آستانہ عالیہ علی پور سیداں شریف۔ آل نبی اولاد علی عالمی مبلغ اسلام نامور مذہبی سکالر پیر سید صاجزادہ حسنات احمد بخاری زیب سجادہ آستانہ عالیہ آل رسول بلجیئم اور عالم نبیل فاضل جلیل مبلغ یورپ خطیب اعظم جرمنی حضرت علامہ مولانا عبد اللطیف چشتی الازہری فاضل بھیرہ شریف تشریف لائے، کانفرنس کی نقابت سید حامد شاہ گیلانی جنرل سیکریٹری ادارہ پاک دارلسلام نے کی،امام مسجد علامہ محمد صدیق مصطفائی نے خوش الہانی کی مثال قائم کرتے ہوئے شہدائے کربلا کانفرنس کی ابتدا تلاوت قرآن پاک سے کی۔ننھے عبد العادی نے بڑے خوبصورت انداز میں نعت شریف پیش کی۔خالد محمود قادری،حاجی محمد افضل بٹ،سید مجاہد شاہ، حاجی اظہر۔قاضی حبیب، افضال شاہ، زین العابدین نے محفل کا رنگ جمایا۔سید محمود الحسن شاہ جو ایسی نورانی محفلوں کی جان ہیں نے خصوصی طور پر سوئٹزر لینڈ سے شرکت کی۔عالم نبیل فاضل جلیل مبلغ یورپ خطیب اعظم جرمنی حضرت علامہ مولانا عبد اللطیف چشتی الازہری فاضل بھیرہ شریف نے اپنے خطاب میں جگر گوشہ رسولﷺ جگر گوشہ بتول (بیٹی یا بیٹے کی اولاد کو سبط کہا جاتا ہے) سبطرسول،سید شباب اہل جنت، سید الشہداء حضرت امام حسین بن علی ؑپر بیان فرمایا ان کو سرنامہ کلام بنایا، آل نبی اولاد علی عالمی مبلغ اسلام نامور مذہبی سکالر پیر سید صاجزادہ حسنات احمد بخاری زیب سجادہ آستانہ عالیہ آل رسول بلجیئم نے اسی سلسلہ کو بڑھاتے ہوئے اپنے خطاب میں جگر گوشہ رسولﷺ جگر گوشہ بتول سبط رسول،سید شباب اہل جنت، سید الشہداء حضرت امام حسین بن علی ؑپر بیان فرمایا۔پھر محفل کا رنگ دیکھنے کو تھا چاروں طرف سے نعروں کی آوازیں گونجنے لگیں آپ نے ایک مکمل تفصیلی بیان فرمایا شرکاء محفل کی آنکھیں نم ہو گئیں اس کے بعد نماز مغرب ادا کی گئی، رانا نے نعت رسول پیش کی۔قونصل جنرل آف پاکستان فرینکفرٹ زاہد حسین کو دعوت کلام دیا گیا، انہوں نے سید حامد گیلانی، افتخار الدین ارشد اور انتظامیہ کا کا خصوصی طور پر شکریہ ادا کیاکہ انہوں نے اتنی پیاری اور نورانی محفل میں آنے کی دعوت دی ان کا کہنا تھا کہ مجھے بڑی خوشی ہوئی ہے کہ میرے ہم وطنوں کی کثیر تعداد اس محفل میں شامل ہے،یہ ایک خوبصورت روایت ہے اس کو ہمیشہ برقرار رہنا چاہیئے،وہ لوگ قابل ستائش ہیں جنہوں نے اس تقریب کا اہتمام کیا ہے جبکہ وہ لوگ بھی قابل سد ستائش ہیں کہ وہ تقریب میں تشریف لائے اور محفل کو رونق بخشی،اللہ کریم یہ کاوشیں قبول فرمائے اور تمام شرکاء محفل کو بھی اللہ کریم کی پاک ذات ثواب دارین عطاء فرمائے (آمین ے ثم آمین)حامد شاہ صاحب کا کہنا تھا کہ مسجد ھذا میں انشا اللہ ایسے پروگرام ہوتے رہیں گے انشا اللہ اس مسجد کو آباد کیا جائے گا۔ نماز کے فوراََ بعد عالمی مبلغ اسلام فخر سادات پیر طریقت رہبر شریعت پیر سید منور حسین جماعتی سجادہ نشین آستانہ عالیہ علی پور سیداں شریف نے اسی سلسلہ کو آگے بڑھاتے ہوئے خطاب فرمایا۔٭ کربلا میں ہو رہا ہے امتحان اہل بیت۔۔تم کو مزدا نار کا اے دشمنانے اہل بیت٭٭ جن کے گھر میں بے اجازت جبرائیل ؑ آتے نہیں۔ قدر والے جانتے ہیں قدر و شان اہل بیت٭پیر سید منور حسین جماعتی نے اہل بیت کا ذکر کیا۔ اختتام سے پہلیدرود و سلام پیش کیا گیا، دعا کی گئی جس میں نہ صرف پاکستان جبکہ پوری دنیا کے مسلمانوں کے لئے دعا فرمائی گئی۔محفل کے اختتام پر لنگر حسینی پیش کیا گیا۔