۔،۔ یوکرین جنگ میں اب تک 400 سے زائد بچے ہلاک ہو چکے ہیں۔نذر حسین۔،۔

٭یوکرین کے پراسیکیوٹر جنرل کے دفتر کے مطابق روسی حملے کے نتیجہ میں ابھی تک تقریباََ 437 بچے ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ 840 بچوں کے زخمی ہونے کی رپورٹ ہے۔ 2013 سے 2017 کے درمیان جنگوں میں تقریباََ 550.000 بچوں کو ہلاک کیا گیا ہے، ان کا رونا کوئی نہیں رو رہا٭

شان پاکستان جرمنی فرینکفرٹ/یوکرین/روس/کونگو/سریا/عراق/نائیجیریا/سومالیہ/مالی۔یوکرینی حکام کے مطابق یوکرین اورروس کی جنگ 437 بچے ہلاک ہوئے ہیں جبکہ کم سے کم 840 بچے زخمی ہوئے ہیں، ان کا مزید کہنا تھا کہ آزاد کرائے گئے علاقوں اور روسی افواج کے زفر قبضہ علاقوں سے ہلاکتوں اور زخمیوں کے بارے میں معلو مات کی تصدیق کر رہے ہیں، اقوام متحدہ کے اعداد و شمار کے مطابق چوبیس فروری کے حملے کے بعد اب تک یوکرین میں 16295 شہری ہلاک ہو چکے ہیں۔ جبکہ انٹرنیشنل رپورٹ کے مطابق۔ افغانستان، یمن، جنوبی سوڈان، وسطی افریقی جمہوریہ، کانگو، شام، عراق، نایجیریا، صومالیہ اور مالی میں صرف اور صرف 550.000 بچوں کہ ہلاک کیا گیا ہے، اگر آپ پانچ سال سے کم عمر کے بچوں کو شامل کرتے ہیں تو کم از کم 868.000 بچے ہلاک ہو چکے ہیں جن میں جن میں موت بالواسطہ تنازعات کے اثرات جیسا کہ بھوک، تباہ شدہ انفرا سٹرکچر اور صحت کی دیکھ بھال تک رسائی کی کمی کے نتیجہ میں ہوئی جبکہ کے جنگ بھی موت کا سبب بنی۔