۔،۔ پاک فوج (آئی ایس آئی۔) خُدا کی نعمت ہے۔ سید علی جیلانی۔،۔

٭خُدا خُدا کر کے قوم ایک بڑی اذیت اور ہیجانی کیفیت سے نکلی،جنرل عاصم منیر نئے آرمی چیف اور جنرل ساحر شمشاد کرزا۔چیئرمین جوائنٹ چیف آف اسٹاف کمیٹی تعینات ہوئے، وزیر اعظم کی سمری پر صدر عارف علوی نے تقرریوں کی منظوری دی۔جنرل عاصم منیر اعزازی شمشیر یافتہ (ڈی جی  ملٹری منٹیلی جنس کے سربراہ کور کمانڈر) گجرانوالہ رہ چکے ہیں ٭

شان پاکستان جرمنی فرینکفرٹ/سوئٹزرلینڈ۔خدا خدا کرکے قوم ایک بڑی ا‍ زیت اور ہیجانی کیفیت سے نکلی جنرل عاصم منیر نئے آرمی چیف جنرل ساحر شمشاد مرزا چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی تعینات ہوئے وزیراعظم کی سمری پر صدر عارف علوی نے تقرریوں کی منظوری دیدی جنرل عاصم منیر اعزازی شمشیر یافتہ DG ملٹری انٹیلی جنس ISI کے سربراہ کور کمانڈر گوجرانوالہ رہ چکے یہ بھی اچھی بات ہے کہ جنرل ساحر شمشاد کی بطور چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی اور جنرل عاصم منیر کی بطور آرمی چیف نامزدگی سے کوئی افسر سپر سیڈ نہیں ہوا اور پی ڈی ایم کے لیڈروں نے آپسمیں مشاورت کی ‎ اور صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی لاہور پہنچے اپنے قیام کے دوران زمان پارک میں چئیرمین پی ٹی آئی عمران خان سے ملاقات و مشاورت کی یہ تعنیاتی کا معاملہ ایسا لگ رہا تھا کہ جیسے ھم نے ھمالیہ کی چوٹی سر کرنی ہے ہر سیاسی پارٹی اس کوشش میں لگی ہوئی تھی کہ کوئی اپنی پسند کا آرمی چیف لگادیا جائے لیکن ھمارے لیڈروں کو سمجھ لینا چاہیئے کہ آرمی چیف ادارے اور ریاست کا ہوتا ہے اور ملکی مفاد کو مد نظر رکھتا ہے نہ کے لیڈروں کے مفاد کو فوجی قیادت کی تقرری کیلئے سینیارٹی کے اصول پر فیصلہ ادارے کی مضبوطی کے ساتھ ساتھ ملک میں استحکام کا بھی باعث ہوتا ہے سننے میں آرہا ہے کہ جنرل عاصم منیر کی بطور آرمی چیف تقرری کے فیصلے پر بھارت میں سوگ کا سماں ہے اور بھارتی اینکرز نے چیخ چیخ کر آسمان سر پر اٹھا لیا ہے لگتا ہے مودی سرکار کو سابق ڈی جی آئی ایس آئی کی بطور آرمی چیف تعیناتی بالکل بھی ہضم نہیں ہورہی ہے پاکستانی فوج دنیا کی بہترین افواج میں شمار ہوتی ہے زلزلہ ہو سیلاب ہو یا دہشتگردی ہر محاز پر پاک فوج نے مثالی کردار ادا کیا پاکستان چونکہ کئی دہائیوں سے دہشتگردی کے خلاف جنگ لڑ رہا ہے جس میں نہ صرف پاک فوج کے جوان بلکہ بزرگ خواتین اور بچے بھی شہید ہوئے پاک فوج کا ماضی ملکی سلامتی یکجہتی دفاع آزادی سالمیت اور سرحدوں کے تحفظ کیلیے بڑا سنہرا اور شاندار رہا ہے آزادی کے صرف اٹھارہ سال بعد ستمبر 1965 میں بھارت کی جانب سے وطن عزیز پر حملہ کیا گیا تو پاک فوج نے جس جواں مردی سے بھارتی فوج کا مقابلہ کیا اور ان کو شکست سے دو چار کیا اس کی مثال تاریخ میں نہیں ملتی اس وقت پوری قوم پاک فوج کے شانہ بشانہ سیسہ پلائی دیوار کی طرح ثابت ہوئ عرب اسرائیل جنگ عراق کویت جنگ اور خلیج کی جنگ میں حلیف عرب ممالک کی فوجی امداد کیلیے بھی نمایاں خدمت انجام دیں بڑی کاروائیوں میں آپریشن بلیک تھنڈر سٹارم آپریشن راہ راست اور آپریشن رد الافساد اور ضرب العضب شامل ہیں پاکستان کے تمام دشمن ممالک 2030 سے پہلے پاکستان کو ختم کرنا چاہتے ہیں اور امریکہ کی 18 خفیہ ایجنسیوں کا کہنا ہے اگر پاکستان کو 2030 تک ختم نہ کیا گیا تو پاکستان سپر پاور بن سکتا ہے اگر پاک فوج اور آئی ایس آئی کو اس ملک سے ہٹادو تو پاکستان کا حال عراق شام جیسا ہونے میں ذرا بہی دیر نہیں لگے گی ملک دشمن عناصرکی سازش کوسمجھو اورپاک فوج اور آئی ایس آئی پاکستان کے لیے اللہ کی بہت بڑی نعمت ہے ملک دشمن سیاسی عناصر میڈیا پر اور سوشل میڈیا پر پاکستان پاک فوج اور آئی ایس آئی کو شدید نقصان پہنچانا چاہتے ہیں تو میری تمام پاکستانیوں سے درخواست ہے ان سیاسی ملک دشمن عناصر کے خلاف آپس میں متحد ہوجائیں فرقہ واریت سے دور رہیں اور پاکستان پاک فوج اور آئی ایس آئی کے خلاف بولنے کی بجاے میڈیا اور سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر پاک فوج اور آئی ایس آئی کا بازو بن جائیں اور سیاسی ملک دشمن عناصر کے بازو توڑ کر رکہہ دیں اسلام کے خلاف جنگ میں پاکستان اہم ترین قلعہ ہے اور پاکستان تب تک فتح نہیں ہو سکتا جب تک پاک فوج موجود ہے اپنی ہی فوج کو شکست دینے میں دشمن کا ہاتھ نا بنیں نئے آرمی چیف جنرل عاصم منیر اس وقت فوج کی قیادت سنبھال رہے ہیں اس وقت ملک بحران کا شکار ہے انہیں پیچیدہ سیاسی داخلی اور بیرونی چیلنجز سے نمٹنا ہوگا جبکہ سب سے ترجیحی بحران معاشی ہے ملک میں سیلاب بے روزگاری بدامنی بھوک اور افلاس ماہانہ بلوں کی ادائیگی ہے پاکستان میں ہر ادارے سیاسی پارٹی یہاں تک کہ سول سوسائٹی سے غلطیاں ہوئی ہیں ان غلطیوں سے سبق سیکھنا اور آگے بڑھنا ہوگا ماضی میں فوج کی مداخلت کی وجہ سے ملک میں جمہوریت جڑیں پکڑنے میں ناکام رہی ہے اور یہی وجہ ہے کہ لوگوں کو شکوک و شبہات ہیں کہ فوج غیر سیاسی رہے گی جنرل عاصم منیر نے قرآن کریم حفظ کیا ہے امید ہے کہ وہ اپنے فرائض کی ادائیگی میں قرآنی ہدایات کو مدنظر رکھیں گے آج جنرل عاصم منیر کو قوم سے 1965 کی جنگ میں قوم میں جو اتحاد اور جذبہ موجود تھا اور فوج سے محبت تھی اسکی سخت ضرورت ہے-